Category: پاکستان
Published on 10 August 2014

برطانیہ فلسطینی بچوں کے قاتل اسرائیل کو ہتھیارفراہم کر رہا ہے، مستعفٰیٰ وزیرسعیدہ وارثی

لندن: برطانیہ کی مستعفی ہونے والی پاکستانی نژاد وزیر سعیدہ وارثی نے کہا ہے کہ انھوں نے استعفے کا فیصلہ ضمیر کی آواز پر کیا۔

غزہ میں ہونے والے جنگی جرائم اور تباہی پر اسرائیل سے جواب طلبی ہونی چاہیے، انھوں نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ غزہ میں بچوں کو قتل کرنے والے اسرائیل کو برطانیہ ہتھیار فراہم کر رہا ہے، غزہ کی بحالی کیلیے واضح منصوبہ بندی کی جائے، سعیدہ وارثی نے کہاکہ فلسطین میں ہونے والے جنگی جرائم پر جواب دینا ہوگا۔

منگل کو غزہ میں اسرائیلی مظالم کے خلاف واضح موقف نہ اپنانے پر پاکستانی نژاد برطانوی وزیر سعیدہ وارثی نے وزارت سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ سماجی رابطے کی ویب سائیٹ پر اپنے پیغام میں پاکستانی نژاد سعید وارثی کا کہنا تھا وہ غزہ کے معاملے پر اپنی حکومت کی پالیسی کی مذید حمایت نہیں کر سکتیں، اس لئے انہوں نے دکھ اور افسوس کے ساتھ  اپنا استعفیٰ وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون کو بھجوا دیا ہے۔

واضح رہے کہ سعیدہ وارثی برطانوی کابینہ میں شامل ہونے والی پہلی خاتون مسلمان رکن ہیں، ان دنوں وہ  وزیر برائے دولت مشترکہ امور کے عہدے پر خدمات سرانجام دے رہی تھیں جبکہ اس سے قبل 12 مئی 2010 سے چار ستمبر 2012 تک وہ برطانوی حکمران جماعت کنزرویٹو پارٹی کی سربراہ کے عہدے پر کام کر چکی ہیں۔


Category: پاکستان
Published on 10 August 2014

ریاست کے تمام اسٹیک ہولڈرز طاہرالقادری کے پاگل پن کے خلاف متحد ہیں، پرویزرشید

اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہرالقادری کی جانب سے تحریک انصاف کے ساتھ انقلاب مارچ کے اعلان پر رد عمل کا اظہارکرتے ہوئے  کہا  کہ ریاست کے تمام اسٹیک ہولڈر طاہرالقادری کے پاگل پن کے خلاف متحد ہیں اب انہیں فوری طورپر کسی ماہر نفسیات رائے لینا چاہئے۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق وزیر اطلاعات سینیٹر پرویز رشید نے کہا کہ طاہرالقادری کا انقلاب یا شہادت کی تمنا ان کو مایوس کرے گی کیونکہ شہادت باکردار لوگوں کا مقدر ہوتی ہے مداریوں کا نہیں۔ انہوں نے کہا کہ طاہرالقادری نے اپنی تقریر میں اشتعال انگیز باتیں کیں جب کہ ریاست کے تمام اسٹیک ہولڈر ان کے پاگل پن کے خلاف متحد ہیں اب انہیں فوری طور پر کسی ماہر نفسیات سے رائے لینا چاہئے، طاہرالقادری چوہدری برادران اور شیخ رشید کو بھی درباریوں کی طرح استعمال کررہے ہیں۔

دوسری جانب وزیر قانون پنجاب رانا مشہود اپنے رد عمل میں کہا کہ پاکستان میں شام اور عراق والا کھیل کھیلنے کی تیاری کی جارہی ہے اور پاکستان کی ترقی روکنے کے لئے ڈرامہ کیا جارہا ہے کیونکہ طاہرالقادری اور چوہدریوں کا ایجنڈا صرف پاکستان کو برباد کرنا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ طاہرالقادری نے آج خطاب کے دوران اپنی ادکاری کے جوہر دکھائے وہ اپنے بے گناہ لوگوں کو گمراہ کررہے ہیں،یہ لوگ مل کر یوم آزادی کو بھی متنازع بنا رہے ہیں اور پاکستان کی آزادی کے دن کو غلامی کا دن بنانا چاہتے ہیں۔

رانا مشہود کا کہنا تھا کہ طاہرالقادری بیرونی آقاؤں کی خواہش پر ملک میں سکون برباد کرنا چاہتے ہیں ان کا اورعمران خان کا اتحاد بہت پہلے سے ہے مگر یہ لوگ اس وقت کیوں خاموش تھے جب لال مسجد میں خون بہا گیا تھا جبکہ جس طرح پنجاب میں پولیس والوں کی جسم کے وردیا پھاڑی گئیں  اور ان پر تشدد کیا گیا کیا یہی ان کا انقلاب ہے۔


Category: پاکستان
Published on 10 August 2014

طاہرالقادری کا انقلاب مارچ عمران خان کے آزادی مارچ کے ساتھ شروع کرنے کا اعلان

لاہور: پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہرالقادری نے اعلان کیا ہے کہ انقلاب مارچ اور آزادی مارچ 14 ا گست سے شروع ہوگا اگر اس دوران قتل کردیا جاؤں تو کارکنان قتل کا بدلہ شریف برادران سے لیں۔

لاہور میں یوم شہدا تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر طاہرالقادری کا کہنا تھا کہ ظلم کی تاریک رات ختم ہونے والی ہے، انقلاب کی فتح یا اپنی شہادت تک ظلم کے خلاف جنگ لڑتا رہوں گا، کسی بھی حربے سے ڈرایا یا جھکایا نہیں جاسکتا، اطلاعات ہیں کہ مجھے کسی بھی وقت شہید کردیا جائے گا لیکن حکمرانوں کو بتادینا چاہتا ہوں کہ شہادت سے ڈرنے والا نہیں،پاکستان کے مظلوم عوام کے حقوق کے لئے شہادت کو ترجیح دوں گا، پنجاب اور وفاقی حکومت پاکستان میں اسرائیل کا کردار ادا کر رہی ہے، ماڈل ٹاؤن کو غزہ بنا دیا گیا ہے جہاں مکینوں کو 7 روز سے کھانے پینے کے لئے کچھ دستیاب نہیں اور اگر ماڈل ٹاؤن کے باہر کوئی شخص ضروری اشیا لینے جاتا ہے تو اسے گرفتار کرلیا جاتا ہے جبکہ ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین نے کارکنان کے لئے کھانا بھجوایا جسے ماڈل ٹاؤن کے باہر ہی روک لیا گیا۔

سربراہ عوامی تحریک کا کہنا تھا کہ یوم شہدا کی تقریب کے لئے حکومت کی جانب سے ٹینٹ اور کرسیاں لانے تک کی اجازت نہیں دی گئی، اپنے حقوق کی آواز بلند کرنے والوں کو تصادم کے لئے اکسانے کی کوشش کی گئی لیکن آخری حد تک اپنے انقلاب کو پرامن رکھیں گے،ہم سرکاری تشدد کی مذمت کرتے ہیں، سرکاری بربریت کے باوجود پرامن رہیں گے کیوں کہ ہم جمہوریت اور امن پر یقین رکھتے ہیں اور ہر قسم کی دہشتگردی کے خاتمے کے خلاف لڑتے رہیں گے۔ انہوں نے کہا کہ انقلاب پھولوں کی سیج نہیں، انقلاب پھل نہیں کہ جھولی میں ڈال دئے جائیں،امریکا، برطانیہ اور یورپ نے بھی طویل جنگوں اور قربانیوں کے بعد آزادی حاصل کی جبکہ پاکستان بھی طویل جدوجہد اور قربانیوں کے بعد معرض وجود میں آیا اور ایک مرتبہ پھر ملک کو ظالم اور جابر حکمرانوں کے شکنجے سے چھڑانے کے لئے قربانیاں دینا ہوں گی، پارلیمنٹ کو کرپشن سے پاک کرنے، غربت کے خاتمے، انصاف کی فراہمی اوراقلیتی برادری کے تحفظ کے لئے جنگ لڑ رہے ہیں، ایسا نظام چاہتے ہیں جیسا امریکا اور یورپ میں رائج ہے جہاں ہر فرد کو بنیادی حقوق حاصل ہیں۔

ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ حکمرانوں کی غنڈہ گردی کے دن گنے جاچکے ہیں، انقلاب کے لئے چلائی گئی تحریک کے دوران عوامی تحریک کے 25 ہزار سے زائد کارکن گرفتار جبکہ ہزاروں شدید زخمی ہوئے، گزشتہ روز خواتین اور مردوں کو زخمی کر کے ان پر لاٹھیاں برسائی گئیں اور سیکڑوں کارکن اب بھی لاپتہ ہیں، عوامی تحریک کے خلاف ریاستی جبر انسانیت کی تذلیل ہے۔ سربراہ عوامی تحریک نے کارکنان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ انقلاب کا سورج جلد طلوع ہونے والا ہے اس لئے 3 دن تک یہیں بیٹھے رہیں گے اور ماڈل ٹاؤن سے باہر کھانا کھانے کے لئے باہر جاتے ہوئے 100، 100 کارکن ٹولیوں کی شکل میں باہر جائیں، اگر کوئی پولیس اہلکار ہاتھ اٹھائے تو اس کے ہاتھ توڑ دیئے جائیں، پنجاب پولیس فیصلہ کر لے کہ اسے ادھر آنا ہے یا ادھر جانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کی جانب سے مجھ پر ٹیکس چوری کا الزام لگایا گیا لیکن بتادینا چاہتا ہوں کہ 1985 سے 2013 تک ایک سال بھی ٹیکس کی ادائیگی کا ناغہ نہیں کیا جبکہ حکومت ٹیکس چور ثابت کرنے کے لئے غیر ملکی بینکوں سے ڈیٹا جمع کر رہی ہے، حکومت چاہے کچھ بھی کر لے مظلوم اور غریب پاکستانی عوام کے حقوق کے لئے جنگ لڑتا رہوں گا۔

تقریب میں تحریک انصاف ، مسلم لیگ(ق)، متحدہ قومی موومنٹ ، عوامی مسلم لیگ، سنی اتحاد کونسل، مجلس وحدت المسلمین کے علاوہ دیگر جماعتوں کے رہنما بھی شریک ہوئے


Category: پاکستان
Published on 09 August 2014

سرگودھا میں عوامی تحریک کے کارکنوں اور پولیس میں جھڑپ، 8 موبائلیں جلا دی گئیں

سرگودھا: بھیرا کے مقام پر پولیس اور عوامی تحریک کے کارکنوں میں جھڑپ کے نتیجے میں پولیس اہلکاروں سمیت درجنوں افراد زخمی ہو گئے جب کہ اس دوران مشتعل افراد نے 8 موبائلوں کو بھی آگ لگادی۔
ایکسپریس نیوز کے مطابق پاکستان عوامی تحریک کے کارکن یوم شہداء میں شرکت کے لئے لاہور آ رہے تھے کہ سرگودھا میں بھیرا کے قریب اللہ انٹر چینج کے مقام پر پولیس نے انہیں روکنے کی کوشش کی جس پر دونوں کے درمیان شدید جھڑپیں شروع ہو گئیں اس دوران فائرنگ بھی کی گئی جس کے نتیجے میں متعدد پولیس اہلکاروں سمیت درجنوں افراد زخمی ہو گئے، پاکستان عوامی تحریک کے مشتعل کارکنوں نے جب پولیس پر دھاوا بولا تو پولیس اہلکار اپنی گاڑیاں چھوڑ کر فرار ہو گئے جب کہ اس دوران مشتعل افراد نے موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے پولیس کی 8 موبائلوں کو آگ لگادی۔
آر پی او راولپنڈی،ڈی پی او جہلم اور ڈی پی اور سرگودھا پولیس کی بھاری نفری کے ساتھ جائے وقوعہ پر پہنچے اور مظاہرین کو مشتعل کرنے کے لئے آنسو گیس کی شیلنگ کی تاہم عوامی تحریک کے کارکنوں کی جانب سے بھی پولیس پر پتھراؤ کیا جا تا رہا ۔
واضح رہے کہ پنجاب کے دیگر شہروں میں بھی عوامی تحریک کے کارکنوں اور پولیس کے درمیان جھڑپیں ہوئیں جس میں عوامی تحریک کے کارکنوں سمیت درجنوں پولیس اہلکار بھی زخمی ہو ئے جب کہ مشتعل افراد نے گزشتہ روز خوشاب میں بھی پولیس اسٹیشن کو نذر آتش کر دیا۔