Category: فیصل آباد
Published on 22 September 2015

فیصل آباد میں سزائے موت کے منتظر معذور قیدی کی پھانسی پرعمل درآمد روک دیا گیا

فیصل آباد: ڈسٹرکٹ جیل میں سزائے موت کے منتظر معذور قیدی عبدالباسط کی پھانسی پر عمل درآمد روک دیا گیا ہے۔

برطانوی نشریاتی ادارے سے بات کرتے ہوئے سیشن جج فیصل آباد دلشاد ملک نے بتایا کہ عبدالباسط کی پھانسی پرعمل درآمد نہیں ہوا ہے کیونکہ پھانسی دینے کے لیے قیدی کو کھڑا ہونا چاہیے تاہم عبدالباسط معذور ہے۔ اس لئے اس کی پھانسی کو عارضی طور پر ملتوی کرتے ہوئے حکومت سے رائے لی جائے گی۔ جیل سپریٹینڈنٹ آئی جی جیل خانہ جات سے رابطہ کریں گے اور پھر سیکریٹری داخلہ تک اس معاملے کو پہنچایا جائے گا تاکہ پھانسی کی سزا پر عملدرآمد کا طریقہ کار معلوم کیا جاسکے۔

اس سے قبل لاہور ہائی کورٹ نے عبدالباسط کی پھانسی رکوانے کی درخواست مسترد کردی تھی، درخواست میں عبدالباسط کے وکلا کا کہنا تھا کہ ان کا موکل عبدالباسط بیمار اور چلنے پھرنے سے قاصر ہیں لہٰذا ان کی سزائے موت پر عمل درآمد نہ کیا جائے۔ جس پر جیل حکام نے عدالت کو بتایا تھا کہ وہ عبدالباسط کو ویل چیئر پر ہی پھانسی گھاٹ تک لے جائیں گے۔

واضح رہے کہ عبدالباسط کو 2009 میں گھریلو تنازعے پر ایک شخص کے قتل کے الزام میں سزائے موت سنائی گئی تھی اور اسے 22 ستمبر کو پھانسی دی جانی تھی۔


Category: فیصل آباد
Published on 17 September 2015

فیصل آباد کی عدالت میں 2 مخالف گروپ گھتم گتھا، پولیس خاموش تماشائی بنی رہی

فیصل آباد: تھانہ تھائیاں والا کی حدود میں کیس کی سماعت کے لئے آنے والے 2 گروپس آپس میں لڑ پڑے لیکن کچہری میں موجود پولیس اہلکار تماشائی بنے رہے۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق تھانہ تھائیاں والا کی حدود میں 2 گروپس آپس کے تنازع کی پیشی کے لئے عدالت میں پیش ہوئے تو ان کے درمیان تلخ کلامی ہو گئی جو دیکھتے ہی دیکھتے ہاتھا پائی میں تبدیل ہو گئی۔ دونوں گروپس کے افراد کی جانب سے ایک دوسرے پر تھپڑوں کی بارش کی گئی اور مُکے برسائے گئے لیکن احاطہ عدالت میں موجود پولیس اہلکار خاموش تماشائی بنے رہے اور لڑنے والوں کے خلاف کوئی کارروائی کرنے کے بجائے انہیں زبانی کلامی روکتے رہے۔

لڑائی ختم ہونے کے بعد دونوں فریقین پیشی کی سماعت کے بغیر ہی اپنے اپنے گھروں کو لوٹ گئے اور پولیس والے انہیں تکتے رہے


Category: فیصل آباد
Published on 27 November 2014

فیصل آباد میں غربت سے تنگ ماں نے نوزائیدہ بچی 40 ہزارروپے میں فروخت کرڈالی

فیصل آباد: رضا آباد کی رہائشی خاتون نے غربت سے تنگ آکر اپنی نوزائیدہ بچی کو 40 ہزار روپے میں فروخت کردیا۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق فیصل آباد کے علاقے رضا آباد کی رہائشی صدف بی بی نامی خاتون کے ہاں گزشتہ دنوں چوتھی بیٹی فاطمہ کی ولادت ہوئی تھی، غربت کی وجہ سے اس نے رافعہ نامی خاتون کے ہاتھوں فاطمہ کو 40 ہزار روپے میں فروخت کرکے پیشگی 20 ہزار روپے لے لئے لیکن کیا کریں اس مامتا کا اسی کے ہاتھوں  مجبور ہوکر صدف بی بی نے رافعہ کو رقم واپس کرکے اپنی بیٹی واپس لے لی۔

بچی واپس لینے  پررافعہ نے متعلقہ تھانے میں صدف بی بی کے خلاف اپنی بیٹی کے اغوا کا مقدمہ درج کرادیا، دوران حراست صدف بی بی کی جانب سے بتائی گئی تمام تفصیلات کے بعد پولیس نے بچی کی خرید و فروخت پر دونوں خواتین کو گرفتار کرلیا ہے۔