پاکستان اوربرطانیہ عمران فاروق قتل اورمنی لانڈرنگ کیس میں رکاوٹیں دورکرنے پرمتفق

لندن: وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار نے یہاں برطانوی ہم منصب تھریسامے سے ملاقات کی جس میں دو طرفہ تعلقات، انسداد دہشت گردی اور سیکیورٹی امور پر گفتگوکی گئی۔ عمران فاروق قتل کیس اور منی لانڈرنگ کیس میں رکاوٹیں دور کرنے پر اتفاق کیاگیا۔ عمران فاروق قتل کیس میں پیشرفت پربھی تبادلہ خیال کیاگیا۔

برطانوی وزیرداخلہ نے دہشت گردی کیخلاف جنگ میں پاکستان کے کردارکو سراہتے ہوئے کہا کہ ہم اس جنگ میں پاکستان کے ساتھ کھڑے ہیں، دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی قربانیوں کی قدرکرتے ہیں، دوطرفہ تعاون مضوبط بنانے پر بھی اتفاق ہوا۔ ذرائع کے مطابق ملاقات میں برطانیہ نے عمران فاروق قتل کیس کے ملزموں کو پکڑنے والے اہلکاروں سے ملاقات کی اجازت مانگی ہے۔ چوہدری نثار نے الطاف حسین کی تقاریرکے حوالے سے بعض معاملات پربات چیت کرتے ہوئے کہاکہ کچھ لوگوں نے پاکستان کو بدنام کرنیکا ایجنڈا اپنے ذمے لے رکھا ہے۔

اے پی پی کے مطابق چوہدری نثار نے کہا پاکستان برطانیہ کے ساتھ اپنے دوستانہ تعلقات کو قدرکی نگاہ سے دیکھتا ہے اور ان تعلقات میں مزید وسعت کا خواہاں ہے۔ دونوں وزرائے داخلہ نے انہانسڈ اسٹرٹیجک ڈائیلاگ کے تحت جاری تعاون پر اطمینان کا اظہار کیا ۔

چوہدری نثار نے کہا بین الاقوامی برادری اسلام فوبیا کا پرچار کرنے اور مسلمانوں کے مذہبی اقدار و جذبات کا تمسخر اڑانے والے عناصر کی حوصلہ شکنی اور دہشت گردی و شدت پسندی کے رحجانات پر قابو پانے میں کلیدی کردار ادا کرے۔ دہشت گردی کے عفریت کا مکمل خاتمہ کرنے کیلیے ضروری ہے کہ دہشت گردوں کے مالی وسائل اور ان کو مالی معاونت کرنیوالوں کیخلاف بھی عالمی سطح پر بھرپور کارروائی کی جائے۔